Sunday, May 26, 2024
Home Blog

Become a Volunteer

Become a Volunteer

Becoming a Volunteer for Mehrban Foundation

Making a Difference One Act of Kindness at a Time

Volunteering is a powerful way to contribute to your community and make a positive impact on the world. One organization that embodies the spirit of giving back is the Mehrban Foundation. This foundation is dedicated to addressing a wide range of social and humanitarian issues, from education and healthcare to environmental conservation and disaster relief. If you’re looking for a way to become a volunteer and make a real difference, joining the Mehrban Foundation could be the answer.

Who is the Mehrban Foundation?

Mehrban Foundation is a non-profit organization committed to improving the lives of people in need, fostering sustainability, and promoting positive change in various communities. Established with a vision to create a world where compassion, generosity, and solidarity reign supreme, the Mehrban Foundation is a platform for individuals who believe in the power of collective action.

Why Volunteer for Mehrban Foundation?

There are countless reasons to consider becoming a volunteer for the Mehrban Foundation:

Diverse Opportunities:

Mehrban Foundation offers a wide range of volunteering opportunities, making it easy for anyone to find a cause that resonates with their passions and skills. Whether you’re interested in education, healthcare, environmental conservation, disaster relief, or social outreach, there’s a place for you.

Impactful Work:

The projects and initiatives undertaken by the Mehrban Foundation are designed to have a tangible, positive impact on the lives of those they serve. As a volunteer, you’ll be directly involved in bringing about change and improving the well-being of individuals and communities.

Personal Growth:

Volunteering is a two-way street. While you contribute your time and skills, you also gain valuable experiences, learn new skills, and broaden your perspective on global issues. Mehrban Foundation offers a platform for personal growth and self-discovery.

Community and Connection:

By joining the Mehrban Foundation, you become part of a like-minded community of individuals who share your passion for making a difference. You’ll forge meaningful connections and friendships with people who are driven by the same sense of purpose.

Flexibility:

Mehrban Foundation understands that volunteers have different time constraints and commitments. They offer flexible volunteering options, allowing you to contribute at your own pace and convenience.

How to Get Started

Becoming a volunteer for the Mehrban Foundation is a straightforward process. Here are the typical steps to get started:

Visit Their Website:

Begin by visiting the Mehrban Foundation’s website. There, you can explore their ongoing projects, learn more about their mission, and find information on how to get involved.

Choose Your Area of Interest:

Determine which cause or project aligns best with your interests and skills. Mehrban Foundation’s projects encompass a wide variety of humanitarian and social issues.

Apply to Volunteer:

Most organizations, including the Mehrban Foundation, have a volunteer application form on their website. Fill out the application, providing your contact information, availability, and the areas where you’d like to contribute.

Orientation and Training:

Once your application is reviewed and accepted, you may be required to attend an orientation or training session to familiarize yourself with the organization’s goals and objectives.

Start Volunteering:

After the orientation and training, you can begin your volunteer work. Whether it’s participating in community events, helping with fundraising efforts, or directly engaging in project activities, your contributions will make a meaningful impact.

Conclusion

Becoming a volunteer for the Mehrban Foundation is not just about giving your time; it’s about joining a movement that strives to make the world a better place for everyone. Your efforts as a volunteer can create ripples of positive change, one act of kindness at a time. So, if you’re looking for a way to give back, learn, and connect with a community of compassionate individuals, consider joining Mehrban Foundation today. Together, we can make a difference.

مہربان فاونڈیشن کے پروگرامز

0

Programs of Mehrban Foundation

Mehrban Foundation is a non-profit organization dedicated to providing education, training, and economic opportunities to people. Our mission is to help people reach their full potential and contribute to a better society.

We offer a variety of programs, including:

* Primary and secondary schools that combine religious and Modern Education
* Mosques, madrassas, and Qur’anic schools
* Religious, social, and economic counseling
* Peaceful advocacy for Islamic education and law
* Regional Qur’anic classes for children and adults

We believe that everyone deserves the opportunity to learn, grow, and succeed. We are committed to making a positive impact on the lives of people in Islamabad and beyond.

Contact Us

مہربان فاونڈیشن کے پروگرامز

مہربان فاؤنڈیشن ایک غیر منافع بخش ادارہ ہے جو لوگوں کو تعلیم، تربیت اور معاشی مواقع فراہم کرنے کے لیے وقف ہے۔ ہمارا مشن لوگوں کو ان کی مکمل صلاحیتوں تک پہنچنے میں مدد کرنا اور ایک بہتر معاشرے میں حصہ ڈالنا ہے۔

ہم متعدد پروگرام پیش کرتے ہیں، بشمول:

* پرائمری اور سیکنڈری اسکول جو مذہبی اور دنیاوی تعلیم کو یکجا کرتے ہیں۔
* مساجد، مدارس، اور قرآنی مکاتب
* مذہبی، سماجی اور اقتصادی مشاورت
* اسلامی تعلیم اور قانون کی پرامن وکالت
* بچوں اور بڑوں کے لیے علاقائی قرآنی کلاسز

ہمیں یقین ہے کہ ہر کوئی سیکھنے، بڑھنے اور کامیاب ہونے کے مواقع کا مستحق ہے۔ ہم اسلام آباد اور اس سے باہر لوگوں کی زندگیوں پر مثبت اثر ڈالنے کے لیے پرعزم ہیں۔

مہربان فاونڈیشن سکول

مہربان فاونڈیشن سکول

تعارف

چیلنجوں اور غیر یقینی صورتحال سے بھری دنیا میں، ایک چیز مستقل رہتی ہے: زندگی کو بدلنے کے لیے تعلیم کی طاقت۔

تعلیم ترقی کی بنیاد ہے، امید کی کرن ہے جو تاریک ترین راستوں کو روشن کر سکتی ہے۔ آج، ہم صرف ایک چیریٹی اسکول کے لیے فنڈز اکٹھا کرنے کے لیے نہیں بلکہ سب کے لیے ایک روشن، زیادہ مساوی مستقبل کی راہ ہموار کرنے کے لیے اکٹھے ہوئے ہیں۔

تعلیم کے اثرات

غربت، جہالت اور مایوسی کو توڑنے کے لیے تعلیم سب سے طاقتور ہتھیار ہے۔ یہ ایک پل ہے۔ یہ مواقع کے دروازوں کو کھولنے اور تخیل سے پرے خوابوں کو حاصل کرنے کی کلید ہے۔ اس کے باوجود، دنیا بھر میں لاکھوں بچے اس زندگی کو بدلنے والے وسائل تک رسائی سے محروم ہیں۔

مہربان فاونڈیشن سکول کا مشن

ہمارا چیریٹی اسکول یہ یقین رکھتا ہے کہ تعلیم کو حق ہونا چاہیے، استحقاق نہیں۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں علم کے بیج بوئے جاتے ہیں، جو بچوں کے ذہنوں اور دلوں کی پرورش کرتے ہیں۔ ہمارا مشن پسماندہ بچوں کو معیاری تعلیم فراہم کرنا ہے، انہیں خواب دیکھنے، سیکھنے اور عروج حاصل کرنے کا موقع فراہم کرنا ہے۔

مہربان فاونڈیشن سکول کا مقصد زندگیوں کو بااختیار بنانا

ہر وہ بچہ جو ہمارے چیریٹی اسکول یعنی مہربان فاونڈیشن سکول کے دروازوں سے گزرے گا وہ انسانی روح کی لچک کا ثبوت ہوگا۔ ہم ایسا تعلیمی نظام لانا چاہتے ہیں جو بچوں کو نوکری یا غلامی کی زنجیر میں باندھنے اور مشین بنانے کے بجائے آزاد، اور بااختیار بنائے ۔ 

آپ کے تعاون سے، ہم ان نوجوان ذہنوں کو اپنی مکمل صلاحیتوں تک پہنچنے کے لیے بااختیار بنا سکتے ہیں۔ ہم انہیں ان اوزاروں اور علم سے آراستہ کر سکتے ہیں جن کی انہیں غربت کی زنجیروں سے آزاد ہونے، اپنی برادریوں اور اس سے باہر رہنما، اختراع کرنے والے، اور تبدیلی لانے والے بننے کے لیے درکار ہے۔

حرکت میں مثبت تبدیلی

جب آپ ہمارے چیریٹی اسکول کے فنڈ ریزر میں حصہ ڈالتے ہیں، تو آپ صرف انفرادی بچوں کی زندگیوں کو تبدیل نہیں کر رہے ہوتے؛ آپ حرکت میں مثبت تبدیلی کا ایک تیز اثر مرتب کر رہے ہیں۔ یہ تعلیم یافتہ اور بااختیار بچے بڑے ہو کر بالغ ہوں گے جو اپنے خاندانوں کی کفالت کر سکتے ہیں، اپنی برادریوں کو ترقی دے سکتے ہیں اور مجموعی طور پر معاشرے کی ترقی میں اپنا حصہ ڈال سکتے ہیں۔

آپ کا تعاون اہم ہے۔

ہم سمجھتے ہیں کہ وقت مشکل ہو سکتا ہے، اور آپ کی توجہ کے لیے بہت سے لائق اسباب ہیں۔ تاہم، ہم آپ سے گزارش کرتے ہیں کہ آپ ہمارے ساتھ شراکت کے گہرے اثرات پر غور کریں۔ آپ کی سخاوت ہمیں مزید اسکالرشپ فراہم کرنے، قابل اساتذہ کی خدمات حاصل کرنے، اور اسکول کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانے میں مدد کر سکتی ہے، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ ہر وہ بچہ جو ہمارے دروازے سے گزرے گا اسے کامیابی کا بہترین موقع ملے گا۔

مہربان فاونڈیشن سکول امید کا تحفہ

تعلیم ایک ایسا تحفہ ہے جو دیتا رہتا ہے۔ ہمارے چیریٹی اسکول کے فنڈ ریزر کو سپورٹ کرکے، آپ صرف تعلیم فراہم نہیں کر رہے ہیں۔ آپ امید کا تحفہ دے رہے ہیں، خوابوں کی تعبیر، اور ایک روشن مستقبل کا۔

تبدیلی کے اس سفر میں ہمارا ساتھ دیں، اور آئیے ہم ان مستحق بچوں کی زندگیوں میں تبدیلی کے محرک بنیں۔ ایک ساتھ مل کر،

ہم امکانات کی دنیا کو کھول سکتے ہیں اور آنے والی نسلوں کو ستاروں تک پہنچنے کے لیے بااختیار بنا سکتے ہیں۔

آپ کی حمایت کا شکریہ.

سید عبدالوہاب شاہ

چئیرمین مہربان فاونڈیشن اسلام آباد

وٹس اپ: 

+92 321 5083475

Mehrban Foundation Beliefs

Mehrban Foundation Beliefs

We believe in a world where every child can read. Mehrban Foundation mission is to invest in early childhood education in order to empower the next generation. We do that, by creating educational programs and providing necessary resources in underprivileged areas. We believe in smart fund allocation, and therefore we employ minimal staff.

ہم ایک ایسی دنیا پر یقین رکھتے ہیں جہاں ہر بچہ پڑھ سکتا ہے۔ ہمارا مشن اگلی نسل کو بااختیار بنانے کے لیے ابتدائی بچپن کی تعلیم میں سرمایہ کاری کرنا ہے۔ ہم ایسا کرتے ہیں، تعلیمی پروگرام بنا کر اور پسماندہ علاقوں میں ضروری وسائل فراہم کر کے۔ ہم سمارٹ فنڈ مختص کرنے پر یقین رکھتے ہیں، اور اس لیے ہم کم سے کم عملہ ملازم رکھتے ہیں۔

Community Charity Service

Community Charity Service

Mehrban Foundation is launching the following services and activities.

Educational Services:

The rural areas of Islamabad, where there are millions of people and mostly the poor and working class of the society are settled here, and these areas have always been hesitant that maybe CDA i.e. Development Authority of Islamabad will build a sector here. Therefore, neither this government organization does development work in these areas nor provides facilities. Roads etc. are being worked on but the real need of man is knowledge and skills. Twenty or twenty years pass in the same hesitation, and the children of the residents of these areas are deprived of good education, which not only increases ignorance and poverty in the society, but also increases the crime rate. Therefore, most criminals are born in these areas.

In these areas, there is no primary school for many miles. Therefore, the people who are of good standing pay thousands of rupees in fees and transport to educate their children in the schools of Islamabad, but the majority of people cannot educate their children.

Mehrban Foundation Islamabad is giving a lot of thought to this issue, and plans to establish a primary school after every kilometer, where children of poor people are given free books and free education. And the level of these schools should not be lower than government schools in any way.

This project of Mehrban Foundation requires a huge budget, in this regard, the support of philanthropists and people of heart is requested.

Skills and training

Mehrban Foundation Islamabad also intends to impart various skills, talents, art and training to the less educated youth. There are many youths who leave their education incomplete due to some reason, and due to lack of education they do not get any job, such youths can take computer courses, electrician, electronic, carpentry, welding, marketing according to their ability. , tailoring etc. wants to enable one to earn a decent living by imparting training and education in various things. It also includes courses for women according to their ability.

Supply Employment Scheme

Mehrban Foundation provides employment to people who know a skill, but cannot practice their skill due to lack of funds, or non-availability of information and support, and all kinds of support, including Wants to give financial, guidance, search included. There are many young people in remote areas who can come to the city and earn good jobs, but there is no one they know in the city who will support them for some time, including housing, food, and employment. Mehrban Foundation Islamabad aims to provide employment assistance, temporary accommodation and food to such youths in Islamabad, so that they can stand on their own feet and earn.

Supply food

Mehrban Foundation Islamabad also plans to provide food to widows and orphans on a monthly basis along with education. which includes ration, house rent, and cooked food and other necessities of life.

Support of Sadat families

An important objective in the establishment of Mehrban Foundation Islamabad, rather it would not be wrong to say that the thought that led to the foundation of Mehrban Foundation was that white-clothed people belonging to Bani Hashim i.e. Sadat families who are also deserving and They do not want to take Zakat, because Sadats are not given Zakat, all kinds of financial support should be given to the beneficiaries belonging to such Sadat families in the name of Atiyab. So that their whiteness is also maintained and financial support can be given to them through donations without Zakat.

In this regard, philanthropists are requested to cooperate through their special Sadat Atiyab. This is a kind of spending that has a lot of rewards, especially when someone donates thinking that it is the family of the Holy Prophet.

Medical facilities

Mehrban Foundation Islamabad also plans to start first aid, dispensaries, ambulance service to provide medical facilities in rural areas. In this regard, by organizing free medical camps of doctors and hakims, people will be provided easy and free treatment.

Funeral arrangements

A big problem for the people of other cities living in Islamabad is funeral. Finding a place for a grave is very difficult. Many people move the dead body of an older man to their native areas, while it is difficult to arrange so much for the dead body of children, so people want to bury them in Islamabad, but there is no place for the grave.

In this regard, dedicating a place for a cemetery in the outskirts of Islamabad where necessary, providing an ambulance service to transfer the dead to their native areas are also included in the plan of Mehrban Foundation.

سخاوت کی خوبیاں

سخاوت کی خوبیاں اور بخالت کی خرابیاں

تحریر : محمد ناصرؔ منیری
بانی و صدر منیری فاونڈیشن، دہلی

سخاوت افعال حسنہ اور صفات حمیدہ میں سے ایک انتہائی پسندیدہ عمل ہے، جو اللہ و رسول ﷺ کو بھی بہت عزیز ہے اور عند الناس بھی اس کا حامل قابل تعریف گردانا جاتا ہے۔ اس کے بر عکس اس کی ضد یعنی بخالت و کنجوسی اللہ و رسول ﷺ کے ساتھ ساتھ عوام الناس کے نزدیک بھی نا پسندیدہ عمل ہے۔ سخاوت کو اللہ پاک بہت پسند فرماتا ہے اور کنجوسی کو بہت ہی ناپسند کرتا ہے۔ اللہ پاک سخی کو جنت عطا فرمائے گا اور کنجوس کو جہنم میں بھیج دے گا۔ احادیث طیبہ میں سخاوت کی بہت فضیلت اور بخالت کی بہت مذمت بیان کی گئی ہے۔ ذیل میں احادیث مبارکہ کی روشنی میں اس کی تفصیل بیان کی جا رہی ہے :

حدیث : 1

عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ عَنِ النَّبِیِّ ﷺ قَالَ :
اَلسَّخِیُّ قَرِیْبٌ مِّنَ اللہِ قَرِیْبٌ مِّنَ الْجَنَّۃِ قَرِیْبٌ مِّنَ النَّاسِ بَعِیْدٌ مِّنَ النَّارِ
وَالْبَخِیْلُ بَعِیْدٌ مِّنَ اللہِ بَعِیْدٌ مِّنَ الْجَنَّۃِ بَعِیْدٌ مِّنَ النَّاسِ قَرِیْبٌ مِّنَ النَّارِ
وَالْجَاھِلُ السَّخِیُّ اَحَبُّ اِلیَ اللہِ مِنْ عَابِدٍ بَخِیْلٍ
(سنن الترمذی، کتاب البروالصلۃ، باب ماجاء فی السخاء، الحدیث۱۹۶۸، ج: ۳، ص:387)

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا :
سخی! اللہ سے قریب ہے، جنت سے قریب ہے، تمام لوگوں سے قریب ہے، جہنم سے دور ہے اور کنجوس! اللہ سے دور ہے، جنت سے دور ہے،تمام لوگوں سے دور ہے، جہنم سے قریب ہے اور جاہل سخی عابد بخیل سے زیادہ اللہ کو پیارا ہے۔

حدیث:2

عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ ﷺ :
اَلسَّخَاءُ شَجَرَۃٌ فِی الْجَنَّۃِ فَمَنْ کَانَ سَخِیًّا اَخَذَ بِغُصْنٍ مِنْھَا فَلَمْ یَتْرُکْہُ الْغُصْنُ حَتّٰی یُدْخِلَہُ الْجَنَّۃَ وَالشُّحُّ شَجَرَۃٌ فِی النَّارِ فَمَنْ کَانَ شَحِیْحًا اَخَذَ بِغُضْنٍ مِنْھَا فَلَمْ یَتْرُکْہُ الْغُصْنُ حَتّٰی یُدْخِلَہ النَّارَ
(مشکاۃالمصابیح،کتاب الزکاۃ،باب الانفاق…الخ،الحدیث:۱۸۸۶،ج۱، ص۳۵۸)

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا :
سخاوت جنت میں ایک درخت ہے، جو شخص (دنیا میں) سخی ہوگا وہ اس درخت کی ایک شاخ کو پکڑے گا تو وہ شاخ اس کو نہیں چھوڑے گی یہاں تک کہ اس کو جنت میں داخل کردے گی اور بخیلی جہنم میں ایک درخت ہے تو جو شخص (دنیا میں) بخیل ہوگا وہ اس درخت کی ایک شاخ پکڑے گا تو وہ شاخ اس کو نہیں چھوڑے گی یہاں تک کہ اس کو دوزخ میں ڈال دے گی۔

حدیث:3

عَنْ اَبِیْ بَکْرِ نِ الصِّدِّیْقِ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ ﷺ لَا یَدْخُلُ الْجَنَّۃَ خِبٌّ وَّلَا بَخِیْلٌ وَّلَا مَنَّانٌ۔ رواہ الترمذی
(مشکاۃالمصابیح،کتاب الزکاۃ،باب الانفاق…الخ،الحدیث:۱۸۷۳،ج۱، ص۳۵۵)

حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : جنت میں کمینی خصلت والا اور کنجوس اوراحسان جتانے والا نہیں داخل ہوگا۔
(اس حدیث کو ترمذی نے روایت کیا ہے۔)

مذکورہ حدیث میں فرمایا گیا ہے کہ “لُچے،کنجوس،احسان جتانے والے جنت میں داخل نہیں ہوں گے” اس کا مطلب یہ ہے کہ جب تک یہ لوگ ان تینوں صفتوں کے ساتھ آلودہ رہیں گے جنت میں نہیں جائیں گے اور جب یہ لوگ بُری خصلتوں سے پاک ہوجائیں گے توجنت میں جائیں گے اور اِن بری خصلتوں سے پاک ہونے کی دو صورتیں ہیں یا تو مرنے سے پہلے ان بری خصلتوں سے سچی توبہ کرلیں یا یہ کہ جہنم میں یہ لوگ اپنے گناہوں کے برابر جل لیں بہرحال جب توبہ کرکے یا اپنے گناہوں کے برابر جہنم میں جل کراِن بری خصلتوں سے پاک ہوجائیں گے توپھر صاحب ایمان ہونے کی وجہ سے جنت میں جائیں گے۔

حدیث:4

عَنْ اَبِیْ سَعِیْدٍ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ ﷺ خَصْلَتَانِ لَا تَجْتَمِعَانِ فِیْ مُؤْمِنٍ اَلْبُخْلُ وَسُوْءُ الْخُلْقِ
(سنن الترمذی،کتاب البروالصلۃ،باب ماجاء فی البخل،الحدیث۱۹۶۹،ج۳، ص۳۸۷ (

حضرت ابوسعید رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : دو خصلتیں مؤمن میں جمع نہیں ہوں گی کنجوسی اور بداخلاقی۔

اس حدیث کا یہ مطلب ہے کہ مؤمن میں کنجوسی اور بداخلاقی یہ دونوں بری خصلتیں بہ یک وقت جمع نہیں ہوں گی مؤمن اگر”کنجوس” ہوگا تو”بداخلاق” نہیں ہوگا اوراگر ”بداخلاق” ہوگا تو”کنجوس” نہیں ہوگا اور جس مسلمان کو دیکھو کہ کنجوس بھی ہے اور بداخلاق بھی تو اس حدیث کی روشنی میں یہ سمجھ لو کہ اس شخص کے ایمان میں کچھ نہ کچھ فتور ضرور ہے۔

مذکورہ احادیث طیبہ سے ظاہر ہے کہ سخاوت اللہ تعالیٰ کو بہت پسند اور کنجوسی بہت ہی ناپسند ہے اور اللہ پاک سخی کو جنت عطا فرمائے گا اور کنجوس کو جہنم میں بھیج دے گا۔
بعض حدیثوں سے معلوم ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کبھی کبھی اپنے بندوں کی سخاوت اور کنجوسی کا امتحان بھی لیا کرتا ہے اس لیے جب کوئی سائل دروازے پر آئے تو ہمیشہ اس کا خیال رکھنا چاہیے کہ کہیں خدا کی طرف سے میرا امتحان تو نہیں ہورہا ہے۔ چناں چہ اس سلسلے میں یہاں اندھے، گنجے اور کوڑھی کے امتحان والی حدیث پیش کی جا رہی ہے جو بہت ہی عبرت خیز اور نصیحت آموز ہے۔

اندھے، گنجے اور کوڑھی کا امتحان

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا :
بنی اسرائیل کے تین آدمی ایک کوڑھی برص والا، دوسرا گنجا، تیسرا اندھا ، اللہ تعالیٰ نے ان تینوں کے امتحان کا ارادہ فرمایا تو ان تینوں کے پاس ایک فرشتے کو بھیج دیا چناں چہ وہ فرشتہ سب سے پہلے برص والے کوڑھی کے پاس آیا اور اس سے کہا کہ دنیا میں تم کو سب سے زیادہ کون سی چیز محبوب ہے؟ تو اس نے کہا کہ اچھا رنگ ، اچھی کھال اور میری یہ بیماری چلی جائے جس کی و جہ سے تمام لوگ مجھ سے گھن کرتے ہیں۔ یہ سن کر فرشتے نے اس کے بدن پرہاتھ پھیردیا تو ایک دم اس کامرض دفع ہوگیااوراللہ تعالیٰ نے اس کوبہترین رنگ اوربہترین کھال عطا فرمادی پھرفرشتے نے اس سے پوچھا کہ تمھیں کون سا ساما ن پسند ہے؟ تو اس نے کہا کہ ”اونٹ” تو اللہ تعالیٰ کی طرف سے اس کو ایک گابھن اونٹنی عطا کردی گئی اور فرشتہ یہ کہہ کر اس کے پاس سے چل دیا کہ اللہ پاک تمھیں برکت عطا فرمائے۔

پھر یہ فرشتہ گنجے کے پاس آیا اور کہا کہ دنیا میں تمھیں سب سے زیادہ کون سی چیز محبوب ہے؟ اس نے کہا : حسین بال اور میری یہ بیماری چلی جائے جس کی و جہ سے لوگ مجھ سے نفرت کرتے ہیں۔ یہ سن کر فرشتے نے اس کے اوپر ہاتھ پھیرا تو دم زدن میں اس کی بیماری جاتی رہی اور اللہ پاک کی طرف سے اس کو نہایت ہی حسین بال عطا کردیے گئے۔ اس کے بعد فرشتے نے پوچھا : تمھیں کون سا مال پسند ہے؟ تو اس نے کہا : ”گاے”۔ پھر اسے ایک گابھن گاے عطا کردی گئی اور فرشتہ یہ کہہ کر چل دیا کہ اللہ تعالیٰ تمھیں برکت دے۔

اس کے بعد یہ فرشتہ اندھے کے پاس آیا اور کہا کہ دنیا میں تم کو کون سی چیز سب سے زیادہ محبوب ہے؟ تو اس نے کہا کہ بس یہی کہ اللہ تعالیٰ میری بینائی کو واپس عطا فرمادے تاکہ میں لوگوں کو دیکھ سکوں۔ یہ سن کر فرشتے نے اس کے اوپر ہاتھ پھر دیا توفوراً ہی بینا ہوگیا اور اللہ تعالیٰ نے اس کی بینائی واپس لوٹا دی۔ پھر فرشتے نے کہا کہ تم کو کون سا مال زیادہ پسند ہے؟ تو اس نے کہا کہ ”بکری” تو اس کو ایک گابھن بکری عطا کردی گئی پھر اونٹنی، گاے، بکری تینوں نے بچے دیئے اور ان میں اس قدر برکت ہوئی کہ کوڑھی کے پاس ایک میدان بھر کر اونٹ ہوگئے۔ اور گنجے کے پاس ایک میدان بھر کر” گائیں” ہوگئیں اور اندھے کے پاس ایک میدان بھر کر بکریاں ہوگئیں، پھر کچھ دنوں کے بعد یہی فرشتہ برص والے کوڑھی کے پاس اپنی اُسی شکل و صورت میں آیا جس شکل و صورت میں پہلی مرتبہ آیا تھا اور آکر اس نے کہا کہ میں ایک مسکین آدمی ہوں اور میرے سفر کے تمام ذرائع ختم ہوچکے ہیں اب اللہ تعالیٰ کے سوا کوئی مجھے وطن پہنچانے والا نہیں ہے میں تم سے اس اللہ کے نام پر جس نے تمھیں اچھا رنگ اور خوبصورت چمڑا اور اونٹ کی دولت عطا کی ہے، ایک اونٹ کا سوال کرتا ہوں کہ اس کے ذریعے میں اپنا سفر تمام کرلوں۔ یہ سن کر کوڑھی نے جواب دیاکہ مجھ پر بہت سے حقوق ہیں(یعنی بہت سے لوگوں کو اور بہت سے کاموں میں دینا ہے) فرشتے نے کہا کہ میں تمھیں پہچانتا ہوں کیا تم کوڑھی نہیں تھے؟ تمہارے برص کی و جہ سے تمام لوگ تم سے نفرت اور گھن نہیں کرتے تھے؟ تم فقیر تھے تو اللہ تعالیٰ نے تمھاری بیماری دور کرکے تمھیں مال عطا فرما دیا۔ یہ سن کر کوڑھی نے کہا کہ مجھے تو یہ مال اپنے بزرگوں سے میراث میں ملا ہے۔ فرشتے نے کہا کہ تم جھوٹ بول رہے ہو تو اللہ تعالیٰ پھر تمھیں ویسا ہی کردے جیسے کہ تم پہلے تھے۔

پھر وہ فرشتہ اپنی صورت میں گنجے کے پاس آیا اور ویسے ہی سوال کیاجیسے کہ کوڑھی سے کیا تھا اور گنجے نے بھی وہی جواب دیا جو کوڑھی نے دیا تھا تو فرشتہ اس کے پاس سے بھی یہی کہہ کر چل دیا کہ اگر تو جھوٹ بول رہا ہے تو اللہ تعالیٰ پھرتجھے ویسا ہی کردے جیسا کہ تو پہلے تھا۔

اس کے بعد یہ فرشتہ اپنی پہلی ہی شکل و صورت میں اندھے کے پاس آیا اور کہا کہ میں ایک مسکین آدمی ہوں اورمسافرہوں میرے سفرکے تمام ذرائع ختم ہوچکے ہیں اب اللہ کی مدد کے سوا میرے وطن پہنچنے کی کوئی صورت ہی نہیں ہے میں تم سے اُس اللہ کے نام پر جس نے دوبارہ تمھیں بینائی عطا کی ایک بکری مانگتا ہوں کہ اس کو میں اپنے وطن پہنچنے کا ذریعہ بناؤں، یہ سن کر اندھے نے کہا کہ جی میں تو اندھا تھا تو اللہ نے مجھے دوبارہ بینائی عطا فرمادی (تم نے اللہ کے نام پر سوال کیا ہے) تو اس میدان میں میری جتنی بکریاں ہیں ان میں سے جتنی چاہو تم لے جاؤ اور جتنی چاہو چھوڑ جاؤ خدا کی قسم! تم اللہ کے نام پر جتنی بھی لے لو گے میں تم سے اس کا مطالبہ کرکے تمھیں مشقت میں نہیں ڈالوں گا۔
یہ سن کر فرشتے نے کہا کہ تم اپنا مال اپنے پاس ہی رکھو تم تینوں کا امتحان لیا گیا ہے تو اللہ تعالیٰ تم سے خوش ہوگیا اور تمھارے دونوں ساتھیوں سے ناراض ہوگیا۔
(صحیح البخاری،کتاب احادیث الانبیاء،باب حدیث ابرص…الخ، الحدیث۳۴۶۴، ج۲،ص۴۶۳)

گوشت پتھر ہو گیا

اسی طرح ایک دوسری حدیث بھی بہت ہی عبرت ناک اور رقت انگیز ہے جس کے راوی حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے ایک آزاد کردہ غلام ہیں۔ ان کا بیان ہے کہ
اُم المؤمنین حضرت ام سلمہ رضی اللہ عنہا کے پاس کسی نے ہدیے میں ایک بوٹی گوشت بھیجا تو چوں کہ نبی ﷺ کوگوشت بہت پسند تھا اُم المؤمنین نے خادمہ سے کہا کہ اس گوشت کوگھرمیں رکھ دوشاید نبی ﷺ اسے کھائیں۔ چناں چہ خادمہ نے اس گوشت کو گھر کے طاق میں رکھ دیا اس کے بعد ایک سائل آیا اور دروازے پر یہ صدا لگائی کہ صدقہ دو اللہ تم گھر والوں کو برکت دے۔ یہ سن کر گھر والوں نے کہہ دیا : اے سائل! اللہ تمھیں برکت دے یہ سن کر سائل چلا گیا پھر اس کے بعد نبی ﷺ مکان میں داخل ہوئے اور فرمایا : اے اُمِ سلمہ! تمھارے پاس کوئی کھانے کی چیز ہے کہ میں اسے کھاؤں؟ تو حضرت اُمِ سلمہ رضی اللہ عنہا نے نوکرانی سے فرمایا کہ تم جاؤ اور رسول اللہ ﷺ کے لیے وہ گوشت لاؤ تونوکرانی گئی لیکن اس طاق میں اس کو ایک چکنے پتھر کے ٹکڑے کے سوا اور کچھ بھی نہیں ملا اس پر حضور ﷺ نے فرمایا کہ تم لوگوں نے فقیر کو گھر میں گوشت ہوتے ہوئے نہیں دیا اور واپس لوٹا دیا تو وہ گوشت پتھر ہوگیا۔ اس حدیث کو امام بیہقی نے اپنی کتاب دلائل النبوۃ میں روایت فرمایا ہے۔
(مشکاۃالمصابیح،کتاب الزکاۃ،باب الانفاق…الخ،الحدیث:۱۸۸۰،ج۱، ص۳۵۷)

اخیر میں بارگاہ پروردگار میں دست بہ دعا ہوں کہ مولاے پاک اپنے محبوب پاک صاحب لولاک ﷺ کے طفیل ہم سب کو خوب خوب سخاوت کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ بخالت و کنجوسی سے بچنے کی توفیق بخشے۔ اور خصوصاً ہم خادمانِ امت کو زیادہ سے زیادہ خدمات دینیہ و علمیہ کی توفیق خیر مرحمت فرمائے۔
(آمین۔ بجاہ النبی الکریم علیہ اکرم الصلاۃ و افضل التسلیم)

صدقہ اور صدقہ جاریہ چند غلط تصورات کی وضاحت

صدقہ اور صدقہ جاریہ چند غلط تصورات کی وضاحت

صدقے کا درست مفہوم “فلاح ” یعنی ویلفئیر پہنچانا ہے۔ ہماری سوسائٹی میں صدقے سے متعلق مالی صدقے کے محدود مفہوم لیا جاتا ہے یعنی وہ رقم جو کسی  ضرورت مند کو ادا کردی جائے وہی صدقہ ہے۔ یقینا  کسی کی مالی مدد کرنا صدقہ ہے لیکن صرف یہی صدقہ نہیں۔ صدقہ ہر وہ کام ہے جس کا مقصد اور نتیجہ مخلوق کو فلاح پہنچانا ہو۔ چنانچہ  کسی کو مسکرا کر دیکھنا ، کسی کی تکلیف دور کرنا ، بیمار کی تیمارداری کرنا، کسی سے خوش اخلاقی سے بات کرنا، کسی جانور کو پانی پلادینا، کسی کو کوئی علمی بات بتانا سب صدقہ ہے۔ جدید دور میں دیکھیں تو روڈ پر گاڑی چلاتے وقت کسی کو راستہ دیے دینا صدقہ ہے، کسی کی سواری خراب ہے تو اس کی مدد کرنا صدقہ ہے،کسی طالب علم کو کوئی سوال سمجھادینا صدقہ ہے، کسی کو  روزگار کے حصول میں مدد دینا صدقہ ہے، نکاح کے لیے جوڑوں کی مدد کرنا صدقہ ہے۔

ایک اورغلط  تصور صدقہ جاریہ کے بارے میں ہے ۔ اس سے مراد بالعموم لوگ مسجد وغیرہ کی تعمیر  ہی لیتے ہیں کہ مسجد کی عمارت کافی عرصے تک قائم رہتی ہے اور اس عمارت میں رقم لگانے صدقہ جاریہ بن جاتا ہے۔ بات درست لیکن ادھوری ہے۔ صدقہ جاریہ کا مفہوم ہے جاری رہنے والا صدقہ۔یعنی فلاح کا وہ کام جس کا  فیض یا فائدہ کئی دنوں، مہینوں، سالوں یا صدیوں تک محیط ہو۔ اب یہ کوئی بھی فلاح کا کام ہوسکتا ہے جسے کسی عمارت کی تعمیر تک محدود نہیں کیا جاسکتا۔ اس میں وہ آرٹیکلز ، تحریریں اور کتب بھی شامل ہیں جن سے لوگ طویل عرصے تک نفع اٹھاتے ہیں، وہ ایجادات بھی شامل ہیں جنہوں نے ہماری زندگی میں آسانیاں پیدا کیں، وہ سائنسی فارمولے اور اصول بھی شامل ہیں جو موجودہ اور قدیم سائنس کی بنیادیں ہیں، وہ ادارے بھی ہیں جو برسوں سے لوگوں نفع پہنچارہے ہیں۔

ایک سوال یہ پیدا ہوتا ہے  آیا صدقہ جاریہ عام صدقے سے زیادہ اہم ہے؟ صدقہ جاریہ کی اصطلاح دراصل اس زمانے میں فلاح کے دو تصورات  کو الگ کرنے کے لیے استعمال ہوئی تھی۔ یعنی ایک تو کسی شخص کی فوری مدد اور دوسرا یہ کہ کسی  فلاحی کام سے ذریعے طویل مدتی مدد۔جہاں تک عام صدقے کا تعلق ہے تو اس کا بھی اثر کافی دیر تک رہتا  اور وہ بھی طویل مدتی ہوسکتا ہے۔ مثال کے طور پر کسی کو کھانا کھلانا بظاہر ایک فوری صدقے کا عمل ہے لیکن اس کھانے سے  اس کی باڈی میں جو خلیات یا سلیز بنیں گے  اور ان کی توانائی کو وہ جب تک استعمال کرتا رہے گا، صدقہ کرنے والے کو اس کا اجر ملتا رہے گا۔ اسی طرح کسی کو مسکرا کر دیکھنے سے اگر اس شخص کی تکلیف دور ہوتی ہے تو اس سکون کی بنا پر اس کی شخصیت میں جو تبدیلیاں آئیں گی وہ صدقہ کرنے والے کے لیے باعث اجر بنتی رہیں گی ۔ چنانچہ ہر صدقہ اپنی نوعیت کے اعتبار سے کسی نہ کسی طور پر صدقہ جاریہ ہی ہے۔  جہاں اجر کا تعلق ہے تو اس کا انحصار ان حالات میں ہے جن میں صدقہ کیا گیا۔  

صدقے کرنے کے کچھ مخصوص طریقے بھی ہمارے ہاں رائج ہیں جیسے  کالے بکرے کا صدقہ ، گوشت پرندوں کو کھلانا، سر پر سے پھیرے دے کر صدقہ کرنا ، انڈا چوراہے پر ڈال دینا وغیرہ۔ ان میں سے اکثر کی نوعیت تو توہمات اور روایات کی ہے۔ البتہ   اس ضمن میں دو پہلو قابل غور ہیں۔ ایک پہلو تو پلے سی بو افیکٹ کا ہے۔ اس کا مطلب یہی ہے کہ انسان کو عمل انہتائی یقین سے کرتا ہے تو اس میں بالعموم کامیاب ہوجاتا ہے۔ چنانچہ صدقہ کی تلقین کرنے والے عام طور پر متاثرہ شخص کی نفسیات کو مد نظر رکھتے ہوئے اس قسم کے اعمال تجویز کردیتے ہیں جن پر لوگوں کو عام طور پر یقین ہوتا ہے کہ ایسا کرنے سے ان کی مشکل آسان ہوجائے گی۔

 دوسرا معاملہ رنگوں کا ہے۔ ہماری بیماری اور پریشانی کی بنیادی وجہ ہمارے ارد گرد منفی انرجی کی زیادتی ہوتی ہے جو ہمارے مثالی جسم یا “اورا “کے رنگوں میں عدم توازن کی بنا پر پیدا ہوتی ہے۔ کالے رنگ کا بکرا، سفید چاول یا اس قسم کی اشیاء کو دان کرنے میں اصل اہمیت بکرے یا چاول نہیں بلکہ رنگوں کی ہوتی ہے جس کا مقصد روحانی ماہرین کے نزدیک اس اورا کے عدم تواز ن کو دور کرنا ہوتا ہے ۔گویا اسے روحانیت کے ایک طریق علاج کے پس منظر میں لیا جانا چاہیے جس سے اختلاف یا اتفاق ممکن ہے۔

آخری سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آیا صدقہ بلاوں کو ٹالتا ہے؟ دنیا کے ہر مذہب میں صدقے کو بہت اہمیت حاصل ہے۔ صدقہ دراصل فلاح پہنچانے کا عمل ہے۔ یہ دنیا نیچر پر قائم ہے اور اس کا اصول یہی ہے کہ جیسا کروگے ویسا بھروگے۔ چنانچہ جب کوئی شخص کسی کو فلاح پہنچاتا ہے تو وہ بھی نیچر کے قانون کے تحت فلاح حاصل کرنے کا مستحق بن جاتا ہے جو اس کی مشکلات میں کمی یا خاتمے کا ذریعہ بن جاتی ہے۔

ڈاکٹر محمد عقیل

مشکلات کیوں آتی ہیں

مشکلات کیوں آتی ہیں

سوال : آپ نے لکھا ہے کہ صدقہ  مصیبتوں کو ٹالتا ہے اور یہ نیچر کا ایک قانون ہے۔ لیکن ہم نے دیکھا ہے کہ بعض لوگ صدقہ کرتے ہیں اور پھر بھی ان پر مشکلات آتی رہتی ہیں۔ کیا یہ لوگ اس قانون سے مستثنی ہوتے ہیں یا کوئی اور وجہ ہے ؟

مشکلات کیوں آتی ہیں

جواب : یہ بہت اہم اور دلچسپ سوال ہے۔ اس پر ایک تھیسس لکھا جاسکتا ہے۔ مختصرا یہ عرض کردوں کہ

انسان دنیاوی اور غیبی امور دونوں میں محض ایک قانون کے ماتحت نہیں ہوتا بلکہ بیسیوں قوانین اس پر لاگو ہوتے ہیں۔ عین ممکن ہے ایک شخص کسی ایک قانون کی تو پابندی کررہا ہو  اور اس کی بنا پر وہ کسی مثبت نتیجے کا مستحق ہو۔ لیکن اسی دوران یہ ممکن ہے کہ وہ کسی اور قانون کی خلاف ورزی کررہا ہو جس کا نتیجہ اسے بھگتنا ہے۔

مثال کے طور پر دنیاوی طور پر ایک شخص  محض فزکس ہی نہیں ، بلکہ کیمسٹری، بیالوجی، اکنامکس ، اور دیگر قوانین کے ماتحت ہوتا ہے۔ اگر ایک شخص فزکس کے قانون کی پابندی کررہاہے  تو اس کا یہ مطلب نہیں کہ اکنامکس کے قانون کی خلاف ورزی پر اسے کھلی چھوٹ مل جائے گی۔ سمجھنے کے لیے اس مثال پر غور کریں۔ ایک شخص اپنے صحت کے اصولوں کی بے حد پابندی کرتا اور کھانے پینے، سونے جاگنے، واک کرنے اور جراثیم  سے بچنے میں  بہت احتیاط کرتا ہے۔ چنانچہ صحت کا قانون اسے انعام کے طور پر ایک اچھی اور عمدہ صحت مند زندگی عطا کردیتا ہے جو فطرت کے اس قانون کے تحت ہے کہ ” جو تم بوتے ہو، وہی تم کاٹوگے”۔ لیکن وہی شخص ڈرائیونگ کے معاملے میں بہت بے احتیاط ہے اور ٹریفک کے قوانین کی بالکل پابندی نہیں کرتا، نہ سگنل کو خاطر میں لاتا اور نہ ہی ڈرائیونگ میں مطلوبہ احتیاط کرتا ہے۔ چنانچہ نیچر کا  وہی  قانون”جو تم بوتے ہو وہی کاٹو گے” اسے اپنی گرفت میں لے کر اسے کسی ایکسڈنٹ سے دوچار کردیتا ہے اور وہ جسم جو صحت کی خرابی سے محفوظ رہا، کسی اور جرم کی بنا پر زخمی ہوگیا۔

یہی معاملہ غیبی  اوردنیوی قوانین کا بھی ہے۔ نظام الٰہی  کے تحت انسان کو کئی قوانین کا سامنا ہوتا ہے اور انسان کے سے پیش ہونے والے معاملات کی کئی وجوہات ہوسکتی ہیں۔ بعض اوقات انسان کسی ایک قانون کی تو پابندی کررہا ہوتا ہے لیکن کسی دوسرے قانون کی خلاف ورزی کرتا ہے جس کے نرغے میں وہ آجاتا ہے  جیسا کے اوپر کی مثال میں بیان کیا گیا ۔  بعض اوقات انسان  کے اعمال میں کوئی کمی کوتاہی نہیں ہوتی ، البتہ آزمائش یا جانچ کی بنا پر اسے مشکل یا مصیبت کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے اور اس کی بہترین مثال حضرت ایوب کی بیماری ہے۔بعض اوقات کسی شخص  میں مطلوبہ استعداد پیدا کرنے کے لیے اسے آزمائش  سے گذارا جاتا ہے ۔  جیسا کہ حضرت یوسف علیہ السلام ، جن کا ایک اہم مقصد  مصر کا حکمران بناناتھا تاکہ عوام کو آنے والے طویل قحط میں ریلیف فراہم کیا جاسکے۔ بعض اوقات  انسان کے اعمال میں تو کوئی خامی نہیں ہوتی، البتہ نظام الٰہی کی کسی گرانڈ اسکیم کے تحت نافذ کی جانے والی مصیبت کا وہ بھی شکار ہوجاتا ہے جیسا دوسری جنگ عظیم میں ان بچوں اور بعض معصوم لوگوں  کا ہلاک  ہوجانا جو کسی طور اس جنگ کے ذمہ دار نہ تھے۔  بعض اوقات دیگر انسانوں کے آزادانہ اختیار کے غلط استعمال سے پیدا ہونے والی  اجتماعی مصیبتوں کا کوئی شخص شکار ہوجاتا ہے ۔ اس کی مثال حکمرانوں کی غلط معاشی پالیسیوں کے نیتجے میں معاشی مسائل پیدا ہوجانا ہیں جس سے وہ شخص بھی متاثر ہوجاتا ہے جو ان حکمرانوں کا تو نہ تو لانے کا سبب ہے اور نہ ہی ان پالیسیوں کا ذمہ دار۔ 

کسی شخص کے ساتھ پیش آنی والی مشکل کی اصل وجہ کیا ہے؟ یہ جاننا  بعض اوقات بہت آسان ہوتا ہے بعض اوقات بے حد پیچیدہ۔ دنیوی معاملات میں تو کوئی شخص اسباب و علل کے قانون کے ذریعے یہ جان سکتا ہے کہ کسی مسئلے کی کیا وجہ ہے۔ البتہ غیبی امور میں یہ تعین کرنا کہ پیش آنے والی مصیبت ہماری کوتاہی ہے، کوئی آزمائش ہے، کوئی فائدہ مند تدبیر ہے یا کچھ اور ، یہ بہت مشکل کام ہے۔ اس کی  مثال حضرت موسی اور خضر  کے واقعے سے ملتی ہے کہ جس میں کشتی والا ابتدائی طور پر  یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ میری ہی کشتی میں سوراخ کیوں ہوا، والدین یہ سوچنے پر مجبور ہیں کہ ان کا بیٹا کیوں فوت ہوگیا۔ یہاں تک کے جلیل القدر پیغمبر حضرت موسی بھی اس پس منظر سے ناواقف رہتے ہیں جب تک انہیں آگا ہ نہ کیا جائے۔

آنے والے مصیبت  ہماری کسی کوتاہی کے سبب تنبیہہ یا عذاب کی صورت میں  آئی ہے یا  یہ کوئی امتحان یا ٹریننگ ہے۔ اس کا تعین ایک ٹیکنک سے کیا جاسکتا ہے۔ اگر مصیبت پڑنے کے بعد اس سے نکلنے کا کوئی راستہ نہ ملے تو سمجھ لینا چاہیے کہ یہ عذاب یا تنبیہہ ہے۔اور اگر اس مصیبت سے نکلنے کے کئی راستے مل جائیں تو سمجھ لیں کہ یہ آزمائش ہے جس کا مقصد انسان کے قول کو عمل سے جانچنا اور اس کی صلاحیتوں کو پروان چڑھانا ہے۔

ڈاکٹر محمد عقیل

مہربان فاونڈیشن فراہمی خوراک

مہربان فاونڈیشن فراہمی خوراک

مہربان فاونڈیشن اسلام آباد کی طرف سے اسلام آباد کے دیہی علاقوں میں غریبوں، یتیموں اور بیواوں میں خوراک کے پیکٹ تقسیم کیے جا رہے ہیں۔

فراہمی خوراک
فراہمی خوراک

اگر آپ بھی خوراک، راشن، زکوۃ، مستحق افراد تک پہنچانا چاہتے ہیں تو مہربان فاونڈیشن ایک بہترین انتخاب ہے۔ اس کے علاوہ جن علاقوں میں پانی کی تنگی ہے وہاں پر مہربان فاونڈیشن بورنگ اور کنویں بھی کھود کر فراہم کرتی ہے۔

آپ کے صدقات، عطیات اور زکوۃ شریعت کی روشنی میں مستحقین تک پہنچانا ہمارا عزم ہے۔

بنی ہاشم سادات خاندانوں کے ساتھ عطیاب کی مد میں تعاون کریں۔

Food Pack Mehrban Foundation Islamabad 1

Best charity is donate water

The Best charity is donating water to thirsty people

Sa’d ibn ‘Ubadah reported: I said, “O Messenger of Allah, my mother has died. Shall I give charity on her behalf?” The Prophet, peace and blessings be upon him, said, “Yes.” I said, “Which charity is best?” The Prophet said, “A drink of water.”

Source: Sunan al-Nasā’ī 3664

Grade: Hasan (fair) according to Al-Albani

عَنْ سَعْدِ بْنِ عُبَادَةَ قَالَ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّ أُمِّي مَاتَتْ أَفَأَتَصَدَّقُ عَنْهَا قَالَ النبي صلى الله عليه وسلم نَعَمْ قُلْتُ فَأَيُّ الصَّدَقَةِ أَفْضَلُ قَالَ سَقْيُ الْمَاءِ

3664 سنن النسائي كتاب الوصايا ذكر الاختلاف على سفيان

3666 المحدث الألباني خلاصة حكم المحدث حسن في صحيح النسائي

Mehrban Foundation Donate a water well (6
Mehrban Foundation Donate a water well (6

Treatment of incurable disease

Scholars have written: If someone is suffering from an incurable disease, he should give water in charity, with its blessing, even incurable diseases can be cured.

Mehrban Foundation Donate a water well
Mehrban Foundation Donate a water well

Narrative:

An abscess appeared on the face of the famous hadith Imam Abu Abdullah Muhammad Hakeem Neshapuri.
Many treatments were done but to no avail.
To a woman in a dream, the Holy Prophet, may God bless him and grant him peace, said:
Tell Abu Abdullah! Donate water to people!
When this came to Imam Hakim, he installed a water bottle at his door, from which people started drinking. It was not even a week later that he was cured and his face was as good as before.
(Sha’b al-Ayman, vol. 3, p. 222)

Mehrban Foundation Donate a water well
Mehrban Foundation Donate a water well

Do you want to donate a water well?

If you want to donate water well then Mehrban Foundation (Registered) Islamabad can provide services in this regard. In our knowledge, there are many places where animals and humans also yearn for clean drinking water. You can donate water well for needy people under the supervision of Mehrban Foundation Islamabad (Registered).
You can also install the whole system of electric cold water machine, or filtration plant for clean drinking water in the neighborhoods etc. under the supervision of Mehrban Foundation (Registered) Islamabad.

Mehrban Foundation Donate a water well
Mehrban Foundation Donate a water well